تصوف اورجہاد(پروفیسر محمد عقیل)


ایک صاحب نے پوچھا’’لوگ جہادکرکے اپنی جانیں کیوں ہلاک کرتے ہیں‘‘؟میں نے جواب دیا:یہ لوگ جنت کی چاہت میں ایساکرتے ہیں۔ انہوں نے کہا: یہ ایک ادھوراجواب ہے۔ درحقیقت وہ دنیاکی آزمائشوں اورپریشانیوں سے پیچھاچھڑانے کے لیے بھی ایساکرتے ہیں اوران کاجہادمذہباًجائزخودکشی کاجوازفراہم کر دیتاہے۔میں ان سے اختلاف کرنے کے باوجودخاموش رہا۔
اچانک میرے ذہن میں ایک دوسری انتہاکاخیال آیایعنی تصوف۔تصوف کی ابتداتونفس کوپاکیزہ کرنے کے فلسفے سے ہوئی لیکن بعدمیں اس نے لوگوں کودنیاکے مصائب وآلام سے فرارکاراستہ فراہم کیا۔فلسفہ کی سطح پروحدت الوجودنے انسانی وجودہی کی نفی کردی اورانسانی زندگی کامقصدخداکی ذات میں خودکوفناکردینابنادیا۔ عوامی سطح پرمراقبہ، چلہ کشی اوروظائف نے دنیاسے فرارکاطریقہ سکھایا۔ دنیاسے نفرت،مادی لذتوں کوحرام سمجھنا، نفس پربلاجوازسختی اورکسب معاش سے گریزنے ایک عام انسان کوصوفی توبنادیالیکن ایک نارمل انسان نہ رہنے دیا۔ حتیٰ کہ بعض مواقع پراسے شریعت سے بھی بے گانہ کردیا۔
مذہب نے کہیں نہیں سکھایاکہ اچھالباس زیب تن کرناممنوع ہے، جائز روزی کماناخداسے دوری کاسبب ہے، اچھی غذاکااستعمال فاسدہے، یادیگرمادی لذتوں سے لطف اندوزہوناناجائزہے۔یہ تمام چیزیں انسان ہی کے لیے بنائی گئی ہیں البتہ ان چیزوں کوآخرت پرترجیح دینا اور اخروی فوائد کو پسِ پشت ڈالناحرام ہے۔تصوف کا ایک پہلویہ بھی ہے کہ وہ آزمائش کے ان تمام معاملات کومعطل کرناچاہتاہے۔ وہ مریض کے دماغ کومسلسل سن رکھناچاہتاہے تاکہ اسے کوئی تناؤ ( Tension)نہ ہو۔حالانکہ ایک حدتک تناؤ( Tension )کا ہونادماغ کے ارتقاکے لیے ضروری ہے۔
اسلام یہ چاہتاہے کہ انسان اسی دنیامیں رہتے ہوئے آزمائشوں کامردانہ وارمقابلہ کرے۔اس کے دل میں جب برائی کااحساس پیداہوتووہ اس کوجھٹک دے۔ اگرنمازمیں وساوس تنگ کریں توانھیں دورکرنے کی سعی کرے۔ دوسری جانب تصوف برائی کااحساس پیداہونے کے عمل کوہی روک دیناچاہتاہے۔ وہ چاہتاہے کہ اگر نمازمیں بچھوبھی کاٹ جائے توخبر تک نہ ہو۔یہ سب کچھ خداکومطلوب نہیں۔کیونکہ خدانے انسانوں کونیکی اوربدی کے شعورکے ساتھ بھیجاہے۔لہٰذاجوکوئی بھی نیکی وبدی کے تصورکوختم کرنے کی سعی کرتاہے وہ خدائی کام میں مداخلت کرتاہے۔ یہ دنیاآزمائشوں کی آماجگاہ ہے۔ہمارامقصدان آزمائشوں میں پورااترنے کی سعی کرناہے اس سے زیادہ خداکوکچھ مطلوب نہیں

Advertisements

تبصرہ کیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s