توبہ کا عملی پہلو


توبہ ۔مضمون نمبر4
توبہ کے بارے میں غلط تصورات
ہمارے معاشرے میں توبہ اور استغفار سے متعلق چند غلط تصورت پائے جاتے ہیں جن میں سے کچھ یہ ہیں
۱۔ زبانی توبہ کو کافی سمجھنا اور عمل سے گریز
۲۔ کسی بزرگ سے دعا کو کافی یا لازم سمجھنا
۳۔ چند وظائف کو توبہ کا نعم البدل سمجھنا
۴۔رونے یا رقت کو لازم تصور کرنا
۵۔گناہ کو ناقابل معافی تصور کرنا اور مایوس ہوجانا
۶۔توبہ کے بعد دوبارہ گناہ سرزد ہوجانے پر گناہ ترک کرنے کی کوشش چھوڑ دینا
۷۔گناہوں کی مغفرت کے بارے میں شفاعت، دعائے مغفرت، ایصال ثواب یا دیگر سہاروں کو بنیاد بنانا
۸۔ عوام کی اکثریت کے عمل کی بنا پر گناہ کو گناہ سمجھنا ترک کردینا
سچی توبہ کے لئے چند ہدایات:
1. شب و روز کا جائزہ لے کر اپنی نافر مانیوں، کوتاہیوں اور بد اعمالیوں شاندہی کریں۔
2. تمام گناہوں پر ندامت محسوس کرتے ہوئے اجمالی طور پر توبہ کریں اور آئندہ نہ کرنے کا عزم کریں۔
3. انفرادی طور پر ہر گناہ کا سبب معلوم کریں۔
4. اسباب کی بنیاد پر گناہ کو دور کرنے کی عملی کوششیں کریں۔
5. ناکامی کی صورت میں کوششیں کرتے ہیں کیونکہ کوشش ترک کرنے کا مطلب نافرمانی پر راضی ہوجانا اور اپنی باگ ڈور شیطان کے حولے کردینے کے مترادف ہے۔
6. نفس کی تربیت کرتے رہیں۔
7. کبھی خدا کی رحمت سے مایوس نہ ہوں کیونکہ ساری انسانیت کے مجموعی گناہ مل کر بھی خدا کی وسیع رحمت سے کم ہیں۔
8. توبہ کو مسئلہ بنائیں جیسے نوکری، بزنس یا شادی کو مسئلہ سمجھتے ، انکے لئے منصوبہ بندی کرتے اور مشکلات کے باوجود ان مقاصد کو حاصل کرنے کی سعی کرتے ہیں۔
9. دعا کرتے رہیں کیونکہ جو کام آپ کے لئےاگر مشکل ہے تو خدا کے لئے کوئی مشکل نہیں۔
10. زبانی استغفار کو حقیر نہ سمجھیں کیونکہ عمل کی ابتدا قول سے ہوتی ہے۔لیکن زبانی استغفار کو کافی بھی نہ سمجھیں بلکہ جسم کے ہر عضو کو توبہ اور رجوع میں شریک کرلیں ۔پھر یہ ممکن نہ ہوگا کہ پائوں غلط جگہ کے لئے اٹھیں، نگاہیں نافرنامانی کا ارتکاب کریں اور دماغ میں معصیت کی سوچیں بسنے لگیں۔

3 responses to this post.

  1. زبردست جناب۔ اس مضمون میں مجھے اپنی ذاتی روز مرہ زندگی کے لیے بہت کچھ ملا ہے۔ آپ کے بلاگ کو میں نے آج بذریعہ ایمیل سبسکرائب کر لیا ہے۔
    آپ کا شکریہ۔

    جواب دیں

  2. Posted by seemab qadeer on 17/05/2011 at 9:20 صبح

    Sir your article has provided information i never had. Thanks for your effort in directing me in particular and others in general about the true meaning of touba. May the public benefit from it.

    جواب دیں

تبصرہ کیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s