موبائل فون


موبائل فون دور جدید کی ایک بڑی مفید ایجاد ہے۔اس کی مدد سے کسی شخص سے مستقل رابطے میں رہا جاسکتا ہے۔ میرے پاس جو موبائل فون ہے، اس میں ایک خصوصیت یہ بھی ہے کہ اس کے ذریعے سے اپنی آواز ریکارڈ کی جاسکتی ہے۔پچھلے دنوں مجھے اپنے موبائل فون کی ایک اور خصوصیت کا علم ہوا۔ وہ یہ کہ اس پر فون کال بھی ریکارڈ ہوسکتی ہے۔
ہوا یہ کہ میں اپنے بعض ریکارڈ شدہ خیالات موبائل پر سن رہا تھا ۔ اسی عمل میں مجھے یہ معلوم ہوا کہ میری بعض فون کالز ساؤنڈ ریکاڈر میں موجود تھیں۔مجھے نہیں معلوم کہ یہ کیسے ہوا، لیکن جب میں نے انہیں سننا شروع کیا تو معلوم ہوا کہ بعض دوست احباب سے کی ہوئی گفتگو بعینیہ وہاں موجود تھی۔میں اس گفتگو کو، اس میں کہے ہوئے الفاظ کو بالکل بھول چکا تھا۔ مگر جب سنا تو سب یاد آگیا۔
اپنی ریکارڈ شدہ آواز کو سننا میرے لیے کوئی نیا تجربہ نہ تھا، مگر یہ جس طرح اچانک اور غیر متوقع طور پر ہوا تھا اس نے مجھ پر سکتہ طاری کردیا۔ مجھے فوراً یہ خیال آیا کہ نامعلوم طریقے پر ریکارڈ ہونے والی اس فون کال کے ذریعے سے اللہ تعالیٰ نے مجھے یہ بتایا ہے کہ وہ انسانوں کے ایک ایک عمل کی وڈیو بنارہا ہے۔وہ ان کی زبان سے نکلے ہوئے ایک ایک لفظ کو ریکارڈ کررہا ہے۔انسان کہہ کر اور بول کر بھول جاتے ہیں۔مگر خدا نہیں بھولتا۔وہ سب محفوظ کرلیتا ہے اور قیامت کے دن انسان کے سامنے اس کے ہر ایک قول و فعل کی آڈیو اور وڈیو پیش کردی جائے گی (مجادلہ6:58)۔
میں نے یہ بات قرآن میں بارہا پڑھی تھی۔ لیکن اس روز جو تجربہ ہوا۔ ا س نے روزِ قیامت کی پیشی کو میرے سامنے گویا مجسم کردیا۔جب ایک ایک انسان کو تنہا اللہ کے سامنے پیش ہو کر زندگی کے ہر عمل کا حساب دینا ہوگا۔انسان چاہے گا بھی تو اپنے اعمال سے، اپنے الفاظ سے مکر نہیں سکے گا۔
قیامت کا دن انسانوں کے احتساب کا دن ہے۔اس دن انسان کو اس کی زبان سب سے زیادہ رسوا کروائے گی۔ عقلمند وہ ہے جو اس زبان کو سوچ سمجھ کر استعمال کرے ۔
(مصنف: ریحان احمد یوسفی)

Advertisements

2 responses to this post.

  1. Jazakallah kharain. The Prophet(s.a.w.) said whoever can control the thing between his two jaws n the thing between his two legs I(s.a.w.) give him the good news of Paradise. It is easier said then done for controlling both things between the jaws n between the legs is with continual remembrance of Allah and asking for forgiveness.

    جواب دیں

  2. بالکل سچی بات کہی آپ نے لیکن ہم لوگ دنیا کی چکا چوند میں اس قدر مگن ہوچکے ہیں کہ ہمیں آخرت کی بالکل بھی فکر نہیں. اللہ پاک ہم سب کو سمجھنے اور اس پہ عمل کرنے کی توفیق دے آمین

    جواب دیں

تبصرہ کیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s