حسد کا ٹیسٹ

کیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ آپ حسد کا شکار ہیں یا نہیں؟ ایکسل فارم میں چند سوالات کے جواب دیں اور اپنا اسکور معلوم کرکے یہ دیکھیں کہ آپ حسد کرتے ہیں یا نہیں۔ فائل ڈاؤں لوڈ کرنے کے لئے نیچے دئے ہوئے لنک پر رائٹ کلک کرکے Save as کریں یا Open پر کلک کریں
حسد کا ٹیسٹ(New)

Advertisements

6 responses to this post.

  1. محترم ۔ ۔ ۔مگر یہ جواب میں صرف اور صرف 1 ہی لیتا ہے۔۔۔ 2 یا 3 تو لکھ ہی نہیں پاتے ؟؟؟؟؟

    جواب دیں

  2. Posted by Umair on 23/06/2012 at 6:32 شام

    assalamolikum
    ma ap k mazameen boht shoq se parhta hon.Allah apko apni rehmat se nawazay.magr
    ?mera apki zaat k baray ma tuaraf boht kam ha.?ap kis profession se wabasta hai
    ?aur kis subject ma Phd ker rahay hain
    ?excel ki file ma diye gay sawal namay ki scoring kese kerni ha

    جواب دیں

    • السلام علیکم
      میرے مضامین پسندکرنے کا شکریہ۔ میرا تعلق ٹیچنگ سے ہے اور میں سوشل سائینس کے سبجیکٹ میں پی ایچ ڈی کررہا ہوں۔ میرا تعارف سائٹ پر موجود ہے۔ ۔سوالنامے کا اسکور کیلکولیٹ کرنے کی ضرورت نہیں جب آپ اسے پر کرلیں گے تو یہ خود بخود آپ کا اسکور کیلکولیٹ کردیگا۔

      جواب دیں

  3. Posted by hamid on 23/06/2012 at 4:19 شام

    عقیل صاحب،

    اس اہم موضوع کے انتخاب پرآپ کا مشکور ہوں خصوصا اس لیے بھی کہ آپ نےاس رویہ کو جانچنے کی لیے ایک سوالنامہ بھی مرتب کیا ، اگرچہ یہ سوالنامہ بہت سادہ ہے، جس میں اپنے آپ کو دھوکا دینا آسان ہے’ میرے کہنے کا مطلب یہ ہے کہ جو فرد حسد میں مبتلا ہے وہ اسے تسلیم کرنے پر آمادہ نہیں ہوتا-

    بہرحال ، چونکہ آپ پی ایچ ڈی کر رہے ہیں تحقیق آپ کے پیشے اور تعلیم کا ایک حصہ ہے تب یقننا آپ کے علم میں ہوگا کہ حسد محض ایک معاشرتی رویہ نہیں بلکہ ایک "اعصابی و نفسیاتی” بیماری ہے، یعنی کہ اس کا نتیجہ ہے-

    اس بات کی تصدیق ایک کتاب "اعصابی و نفسیاتی بیماریاں” سے بھی ہوتی ہے مصنف نے حسد کو اسی زمرے میں شمار کیا ہے-

    میرا اپنا ذاتی تجربہ بھی یہی ہے کہ جب میں بیمار پڑا تو حاسد ہو گیا لیکن جب میں اس بیماری سے باہر آیا تو میرا حسد ختم ہوگیا اور میری بیماری بھی اعصابی و تفسیاتی ہی تھی-

    اس کے بعد میں نے ایسے تمام لوگوں کا مشاہدہ بھی کیا اور اپنے اعتماد کے لوگوں سے انٹرویو بھی کیے اور وہ تمام لوگ جو اعصابی و نفسیاتی بیماریوں میں مبتلا تھے ان میں سے اکثر لوگوں نے اپنے حاسد ہونے کا اعتراف بھی کیا-

    مجھے امید ہے کہ آپ اس موضوع پر ایک بار پھر لکھیں گے؛کیوں کہ حسد میں مبتلا افراد اگر طاقتور ہیں تو اپنے اردگرد کے لوگوں کو ازحد پریشان رکھتے ہیں اگر وہ کمزور حیثیت کے حامل ہیں تو نقصان اٹھاتے ہیں، جس کے فورا بعد یا عمر کے ایک خاص حصے میں [40 سال کے بعد] یا جب بھی قوی کمزور ہونے لگتے ہیں یا جب بھی کسی بیماری کا حملہ ہوتا ہے تو انکے اندر اعصابی بیماریاں ، نفسیاتی بیماریوں میں تبدیل ہونے لگتی ہیں-

    شکریہ

    جواب دیں

    • السلام علیکم
      آپ کے تفصیلی فیڈ بیک کا شکریہ
      آپ نے درست فرمایا کہ حسد ایک تفصیلی موضوع ہے۔ میرا ارادہ ہے کہ اس پر ایک تفصیلی مقالہ تحریر کروں۔ جہاں تک سوالات کے سادہ ہونے کا سوال ہے تو میں انشاءاللہ اگلی مرتبہ اسے بہتر بنانے کی کوشش کروں گا

      جواب دیں

تبصرہ کیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: