معاشی کرائسس – میں کیا کروں ؟


بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
ڈاکٹر محمد عقیل
” سر جی، حالات جتنے خراب ہورہے ہیں اس سے یوں لگ رہا ہے کہ ہم حرام کمانے پر مجبور ہوجائیں گے۔”
میرے گھر کام کرنے والے ایک مزدور نے بتایا۔وہ کہنے لگا۔
” آج ہی ایک عورت روتے ہوئے بتارہی تھی کہ حالات سے مجبور ہوکر آج وہ اپنی تین بیٹیوں کو دہاڑ ی پر لگا کر آئی ہے۔”
میں کانپ کر رہ گیا پڑھنا جاری رکھیں

دولت کی فراہمی کا خدائی نظام


(Divine System of Wealth Distribution)
ڈاکٹر محمد عقیل
دولت کیسے حاصل کی جاتی ہے؟ کیا دولت مند ہونا محض مقدر کا کھیل ہے؟ کیا یہ صرف محنت پر منحصر ہے؟ کیا دولت کے حصول میں ناجائز اور جائز کا بھی کوئی فرق ہے ؟ کیا دولت دینے میں خدا یا قسمت کا کوئی کردار ہے؟ آخر یہ کیا وجہ ہے کہ کچھ لوگ بے پناہ دولت مند ہوتے ہیں اور کچھ کو دو وقت کی روٹی بھی نصیب نہیں ہوتی؟ ان سوالات کے ساتھ ساتھ دیگر اہم امور جو دولت کے حصول سے متعلق ہیں ، ان کا آج کے مضمون میں ہم تفصیل اور سائنٹفک طریقے سے جواب دیں گے۔
تحریر اردو میں ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے نیچے کلک کریں
Divine System of Wealth Distribution Final

قاری قرآن اور حکمت


عبدالرشید خان

قرآن مجید کی تلاوت کے ثواب کے ضمن میں درج ذیل آیت کا حوالہ اکثر دیا جاتا ہے:
"اور قرآن کو خوب ٹھہر ٹھہر کرپڑھو. اب جتنا قرآن آسانی سے پڑھ سکتے ہو پڑھ لیا کرو۔”المزمل:73:4,20
اللہ تعالیٰ کی طرف سے کتاب حکمت اور ضابطہ حیات، قرآن کی صورت میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے توسط سے نسل انسانی کی ہدایت کے لیے بھیجا گیا-بہت سے لوگ تو اسے پڑھنا ہی نہیں جانتےمگر ایک بہت بڑی تعداد جو قرآن پڑھتی ہے وہ صرف اور صرف ثواب کی نیت سے قرآن پڑھتے ہیں اور ثواب ہی حاصل کرنا مقصودہوتا ہے ۔ یہ اگرچہ مستحسن ہے لیکن اصل مقصد ہدایت کا حصول ہے۔بہت کم لوگ ہیں جو ترجمہ کے ساتھ قرآن کی تلاوت کرتے ہوں گے ۔سب سے افضل طریقہ یہ ہے کہ قرآن کو سمجھ کر پڑھا جائے، اس سے ہدایت حاصل کی جائے اور پھر اس پر عمل کرنے کی پوری سعی کی جائے۔یہی اللہ تعالیٰ کوبھی مقصود ہے۔
ارشاد ِ ربانی ہے:
"یہ اس کتاب کی آیات ہیں جو حکمت و دانش سے لبریز ہیں۔” یونس 10:01

توجہ کا اکرام


اکثر دیکھنے میں آیا ہے کہ نماز پڑھتے وقت ہماری توجہ نماز کی بجاۓ دوسری جانب مبذول ہو جاتی ہے. اس میں شیطانی وسوسوں کا بھی بڑا دخل ہے کہ ابلیس نے اللہ تعالیٰ سے انسان کو ورغلانے کاوعدہ کیا تھا.اور وہ آپ کا دھیان دوسری طرف مبذول کرانے میں کامیاب ہو جاتا ہے. پڑھنا جاری رکھیں

گناہ کا حقیقی تصور


گناہ سے بچنے کے لیے گناہ کو سمجھنا بہت ضروری ہے کہ گناہ کیا ہے؟ گناہ دراصل خدائی قوانین کی خلاف ورزی کا نام ہے۔ اس لحاظ سے دیکھا جائے تو خدائی قوانین کی کئی اقسام ہیں۔ ایک قسم مادی قوانین کی ہے جیسے کشش ثقل کا قانون۔ جو اس کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اونچی جگہ سے بلا سہاراچھلانگ لگائے گا تو اس کی سزا زخمی یا ہلاک ہونا لازمی ہے۔
دوسرے قوانین اخلاقی قوانین ہیں ۔ ان قوانین کا منبع ہماری فطرت یا ضمیر ہے۔ ان قوانین کی خلاف ورزی بھی گناہ ہے۔ جیسے چوری کرنا پڑھنا جاری رکھیں

لیبر ڈے اور ہم


ڈاکٹر محمد عقیل
لیبر کے حوالے سے ہمارے ہاں چند غلط تصورات پائے جاتے ہیں۔ پہلا تصور لیبر کو مزدور سمجھنا ہے۔ ہمارے ہاں لیبر سے مراد اینٹیں اٹھانے والامزدور ،نائی ، موچی یا ہاتھ سے کام کرنے والا کوئی شخص سمجھا جاتا ہے۔ جبکہ اکنامکس میں لیبر سے مراد ہر وہ شخص ہے جو اپنی سروسز یعنی خدمات دے کر اس کے بدلے میں اجرت یا سیلری لیتا ہے۔ پڑھنا جاری رکھیں

ووکیشنل ایجوکیشن اور پاکستان کا عمومی رویہ

اگر کوئی نوجوان ہمارے ملک میں الیکٹریشن بننا چاہے، کار مکینک بننا چاہے، پلمبر بننا چاہے یا اسی طرح کے کسی اور شعبے میں آنا چاہے تو اسے مارکیٹ میں بیٹھے ہوئے کسی روایتی استاد سے یہ کام سیکھنا پڑے گا۔ ویسے بھی اس طرح کے تمام شعبوں میں زیادہ تر وہی نوجوان آتے ہیں جو یا تو میٹرک میں فیل ہوجاتے ہیں یا پھر ساتویں آٹھویں کلاس سے ہی بھاگ کر مطالبہ کرتے ہیں کہ انہیں کوئی کام سکھا دیا جائے۔ لہٰذا ان نوجوانوں کو تعلیمی میدان میں نااہل اور بھگوڑا تصور کرتے ہوئے روایتی استاد کی دکان پر چھوڑ دیا جاتا ہے پڑھنا جاری رکھیں