بدگمانی

تزکیہ نفس
پروفیسر محمد عقیل

 

ٹائٹل کی آیت: اے ایمان والو ! بہت سے گمانوں سے بچو کیونکہ بعض گمان صریح گناہ ہوتے ہیں۔(الحجرات۔۴۹:۱۲)
ٹائٹل کی حدیث: ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺنے فرمایا کہ تم بد گمانی سے بچو اس لئے کہ بدگمانی سب سے زیادہ جھوٹی بات ہے۔اور کسی کے عیوب کی جستجو نہ کرو اور نہ اس کی ٹوہ میں لگے رہو۔۔(بخاری ، جلد سوم:حدیث ۱۰۰۴)
کیس اسٹدی: ایک محلے میں ایک عورت آکر بسی ۔ وہ اکیلی رہتی تھی۔لیکن وہ ہمیشہ بہت باریک ریشم کا لباس پہنتی ، بہت تیز خوشبو کا استعمال کرتی اور اکثر چہرے پر پاؤڈر لگاکے رکھتی تھی۔وہ جب بھی باہر نکلتی تو محور نگاہ ہوتی۔ اسکے گھر کے سامنے نئے ماڈل کی گاڑیا ں آکر رکتیں جن میں مرد حضرات اور بعض اوقات خواتین بھی آتیں۔ محلے میں کوئی اس سے تعلق نہ رکھتاتھا۔محلے والے چہ مہ گوئیاں کرتے اور اشاروں کنایوں سے اس عورت کے بارے میں اپنی بد گمانی کا اظہار کرتے۔

سوالات:
۱۔یہ عورت کون ہے؟
۲۔اسلامی نقطہ نگاہ سے اس کے بارے میں کیا رائے رکھی جائے؟
۳۔کیا اس کے بارے میں محلے والوں کی رائے گناہ ہے؟
یہ جاننے کے لئے درج ذیل مضمون کو پڑھیں اور بدگمانی سے بچیں۔

گمان کا مفہوم: گمان سے مراد کسی فرد یا شے کے بارے میں اندازہ لگانا اورکوئی ابتدائی رائے قائم کرنا ہے۔ گمان کرنے کی اپنی ایک اہمیت ہے۔ مثال کے طور پر یہ ظن اور تخمین ہی سائنسی دریافتو ں کا سبب بنتا، عدالتی کاروائی میں معاون ہوتا اور معاشرتی امور میں مدد فراہم کرتا ہے۔ لیکن گمان اس وقت تک کار آمد ہے جب تک علم کامل نہ ہوجائے۔مثال کے طور پر پہلے انسان کا گمان یا اندازہ تھا کہ زمین مرکز کائنات ہے لیکن گلیلیو کی دریافت نے بتایا کہ زمین تو سورج کے گرد محو گردش ہے۔ اس سے یہ غلط گمان دور ہوگیا۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ گمان اس وقت تک اہم ہے جب تک کہ اس کا پورا علم نہ حاصل کرلیا جائے۔اگر علم کامل ہوجائے تو یہی گمان یقین میں بدل جاتا ہے یا پھر رد ہوجاتا ہے۔
کیس کا دوسرا حصہ
ایک دن وہ عورت کئی دنوں سے باہر سودا لینے نہیں آئی تو لوگوں کو تشویش ہوئی۔ایک پڑوسن ہمت کرکے اس کے گھر پہنچ گئی، وہ بیمار تھی۔ پوچھنے پر اس عورت نے بتایا کہ وہ درحقیقت جلد کی بیماری میں مبتلا تھی اس لئے وہ باریک ریشم کے کپڑے پہنتی ، بدبو سے بچنے کے لئے خوشبو لگاتی تھی۔ وہ جو گاڑیا ٰ ں آکر رکتی تھیں وہ سب اسکے امیر بہن بھائی تھے جو اس کا حال احوال پوچھنے آتے تھے۔
یہاں آپ دیکھیں کہ جیسے ہی آپ کا علم مکمل ہوا ، آپ کا گمان یا بدگمانی ختم ہوگئی اور اسکی جگہ یقین نے لے لی۔
کثرت گمان کا مفہوم: کثرتِ گمان کا مطلب لوگوں کے قول فعل یا اشیاء کے بارے میں بہت زیادہ اندازے لگانا اور وہم کی بنیاد پر رائے قائم کرنا کی عادت ڈالنا ہے۔اس عادت کے نتیجے میں ایسے گمان پیدا ہونے کا بھی اندیشہ ہے جو معاشرتی فساد کا سبب بنے یا وہ اپنی ذات میں گناہ ہو ۔بہت زیادہ گمان کرنے سے روکنے کی وجہ مسلمان معاشرے کو توہمات سے بچانا، نفرتیں ختم کرنا اور باہمی اخوت و بھائی چارے کو فروغ دینا ہے۔
اچھا گمان رکھنا:

گمان کلیتاََ حرام نہیں بلکہ صرف وہ گمان ممنوع ہے جو گناہ ہو یا گناہ کا سبب بنے۔مثال کے طور پر کسی اجنبی سے مل کر یہ گمان رکھنا کہ یہ نیک ہی ہوگا۔یا راہ چلتے ہوئے کوئی دھکا لگنے پر یہ سمجھنا کہ غلطی سے ہوگیا ہوگا یہ خوش گمانی ہے۔
حدیث: حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اللہ رب العزت فرماتا ہے میں اپنے بندوں کے گمان کے مطابق ان سے معاملہ کرتا ہوں جب وہ مجھے یاد کرتا ہے تو میں اس کے ساتھ ہوتا ہوں اگر وہ اپنے دل میں مجھے یاد کرتا ہے تو میں بھی اسے اپنے دل میں یاد کرتا ہوں اور اگر وہ مجھے کسی گروہ میں یاد کرتا ہے تو میں بھی اسے ایسی جماعت میں یاد کرتا ہوں جو ان سے بہتر ہے اور اگر وہ ایک ہاتھ میرے قریب ہوتا ہے تو میں چار ہاتھ اس کے قریب ہوتا ہوں اور اگر وہ میری طرف چل کر آتا ہے تو میں (میری رحمت) اس کی طرف دوڑ کر آتا ہوں۔ [صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 2308
بدگمانی کا مفہوم: اس سے مراد کسی فرد یا شے کے بارے میں کوئی ایسی منفی رائے یا اندازہ قائم کرنا جس سے اخوت اور بھائی چارہ پر اثر پڑے۔
بدگمانی کرنے کے اسالیب:

 کسی کے بارے میں اندازہ اس کے قول یا فعل سے لگایا جاتا ہے۔چنانچہ بدگمانی کے بھی یہی اسالیب ہیں
۱۔کسی کی باتوں کا غلط مفہوم اخذ کرنا جیسے کسی نے کہا کہ احمد بہت اچھا انسان ہے ۔تو آپ نے سمجھا کہ شاید یہ مجھے برا انسان سمجھتا ہے۔
۲۔ کسی کے چہرے مہرے یا با ڈی لینگویج سے اندازے لگانا مثلاََ کسی کی کرخت شکل دیکھ کر یہ سمجھنا کہ کہ ضرور جرائم پیشہ ہوگا۔
۳۔کسی کے فعل کو غلط طور پر لینا جیسے کوئی شخص اذان سن کر بیٹھا رہا اور آپ نے یہ گمان کرلیا کہ وہ بے نمازی ہے۔یا جیسے کسی شخص نے آپ کی بات کا جواب نہ دیا تو آپ نے گمان کیا کہ یہ مغرور ہے۔
۴۔ کوئی قیمتی چیز (مثلاََ سونے کی چین) رکھ کر بھول جانا اور پھر کام کرنے والی ملازمہ پر شک کرنا
۵۔ ساس کا بہو اور بہو کا ساس کو اپنا دشمن سمجھنا
۶۔مذہبی لوگوں کا مخالفین کو کافر، منافق، بدنیت سمجھنا
۷۔ توہمات پر یقین کرنا جیسے ہاتھ کی لکیروں یا ستاروں کی چالوں سے زندگی کے معاملات طے کرنا
بدگمانی کے اسباب:
۱۔ادھورا علم: یہ گمان کی وجہ اور بدگمانی کا بنیادی سبب ہے۔جیسے ایک شفیق خدا کو دشمن گرداننا۔ اسکی بنیادی وجہ خدا کی شفقت کا ادراک نہ ہونا ہے۔
۲۔منفی سوچ: اس کا مطلب کسی بات کے منفی پہلو کو مثبت پر ترجیح دینے اور مایوس ہونے کی عادت ہے ۔مثال کے طور پر ساس کا مہربان رویہ دیکھ کر یہ سوچنا کہ ضرور دال میں کچھ کالا ہے۔
۳۔غلط فہمی: جیسے دور ڈبل سواری پر آنے والے دو شریف لڑکوں کو ڈاکو سمجھ لینا۔
۴۔کسی متعین شخص سے نفرت یا شکایت: جیسے ہندؤوں یا یہودیوں کو ظالم ، بددیانت اور سازشی سمجھنا
۵۔ ماضی کا تجربہ :کسی پولیس والے کی زیادتی کی بنا پر پولیس کے محکمے کو ظالم خیال کرنا
۶۔ عدم تحفظ کا احساس: اندھیرے میں بھوت پریت کو محسوس کرنا
۷۔ انسانی یا جناتی شیطان کی وسوسہ انگیزی: کسی کے بہکاوے میں آکر بدگمانی کا شکار ہوجانا
بدگمانی کے نقصانات:

۱۔ نفسیاتی بیماریاں ۲۔ باہمی نفرتیں ، رنجشیں، رقابتیں ۳۔معاشرے میں انتشار ۴۔لڑائی جھگڑا اور قتال ۵۔ خاندانی ، قبائلی، لسانی اور اداروں کی رقابتیں
ؓبدگمانی کا علاج: ۱۔اگر مسئلہ اہم ہے تو معلومات میں اضافہ کر کے گمان کو خاتمہ کردیں۔
۲۔دوسروں کے متعلق بہت زیادہ سوچنے اور بلاوجہ رائے قائم کرنے سے گریز کریں
۳۔ اپنی منفی سوچوں پر قابو رکھیں اور کسی بھی ناخوشگوار خیال پر گرفت کریں۔
۴۔ اگر کسی کے خلاف کوئی بدگمانی پیدا ہو جائے تو آخری حد تک بدگمانی سے جنگ لڑیں۔ مثال کے طور پر کسی شخص نے آپ سے بد تمیزی سے بات کی اور آپ نے یہ سوچا کہ شاید یہ یہ میرا دشمن ہے۔ تو یہ گمان کریں کہ وہ میرا دشمن نہیں اور ممکن ہے وہ کسی گھریلو پریشانی میں الجھا ہوا ہو جس کی بنا پر وہ لڑا ہو۔
۴۔ اپنا حق لوگوں کے لئے چھوڑنا شروع کریں۔
۵۔ لوگوں کو انکی غلطی پر معاف کرنا سیکھیں کیونکہ اگر غلطی آپ کی ہے تو معا فی کیسی؟
۶۔ یہ ایک دن کا کام نہیں۔ لہٰذا ناکامی کی صورت میں کوشش جاری رکھیں۔

سوالات برائے ڈسکشن

سوال نمبر۱: برطانیہ میں صبح جب لوگ اپنے دفتر جاتے ہوئے سگنل پر گاڑی روکتے ہیں تو خیر سگالی کے طور پرایک دوسرے کو مسکر ا کر دیکھتے ہیں۔ اگر پاکستان میں ایسا ہو تو لوگ عام طور پر کیا سمجھیں گے؟
سوال نمبر۲: نوجوان لڑکا اور لڑکی اسکوٹر پر بیٹھ کر جارہے ہیں۔ انہیں دیکھ کر با لعموم لوگ کیا سوچتے ہیں اور کیا سوچنا چاہئے؟
سوال نمبر۳: افضل نے گھر کی بیل بجائی، اندر سے ایک بچہ باہر آیا اور بولا ، ابو گھر پر نہیں ہیں۔ حالانکہ ابو کی گاڑی باہر کھڑی تھی۔ افضل کا گمان کیا ہونا چاہئے۔
سوال نمبر ۴: ٹیچر نے کلاس لینا شروع کی۔اچانک محسوس ہو ا کہ ایک لڑکا مسلسل آنکھ کو اس طرح حرکت دے رہا ہے جیسے وہ آنکھ مار رہا ہو۔ ٹیچر کو غصہ آیا اور اس نے لڑکے کو باہر نکال دیا۔ بعد میں لڑکے نے بتایا اسکی دائیں آنکھ کا پپوٹا خراب ہے اور یہ مسلسل حرکت میں رہتا ہے۔ ٹیچر نے ساری کہا۔ اس کیس میں کیا ٹیچر کا رویہ درست تھا؟
سوال نمبر۵: آپ کیا اسٹار کیا ہے؟ کیا آپ اسٹارز اور ہاتھ کی لکیروں وغیرہ پر یقین رکھتے ہیں؟ ہماری سوسائٹی کے کوئی پانچ توہمات بیان کریں۔
سوال نمبر ۶: ’’ کزن میرج سے ایب نارمل بچہ پیدا ہونے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں‘‘۔ کیا یہ مانناتوہما ت میں آتا ہے؟
سوال نمبر ۷۔ کیا دو بھائیوں کو بے دردی کے ساتھ قتل کیا گیا اس میں بدگمانی بھی شامل تھی کہ وہ ڈاکو ہیں؟

Advertisements

تبصرہ کیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s